Marne Ke Baad Apne Rishta Dar Se Mulaqat Ho Gi ! Marne Ke Baad Kya Hota hai ! Ruh Ki Mulakat | موت کے بعد کی زندگی پر ایمان

مرنے کے بعد اعضادوسرے کو دینے کی وصیت

Marne Ke Baad Apne Rishta  Dar Se Mulaqat Ho Gi ! Marne Ke Baad Kya Hota hai ! Ruh Ki Mulakat | موت کے بعد کی زندگی پر ایمان

مسئلہ(۲۳۴): کسی انسان کا یہ کہنا یا لکھ دینا کہ میرے مرنے کے بعد، میرے اعضاء مثلاً: دل، گُردہ، اور آنکھ وغیرہ کسی ضرورت مند شخص کے جسم میں پیوندکاری کے لیے استعمال کیے جائیں ، جسے عرفِ عام میں وصیت کہا جاتا ہے، شرعاً اس کا کوئی اعتبار نہیں ہے، کیوں کہ وصیت کا تعلق اپنی مملوک اشیاء سے ہوتا ہے، اور انسان اپنے جسم کا مالک نہیں ہے، لہٰذا ایسی وصیت وخواہش شرعاً قابلِ اعتبار نہیں ہے، اور نہ اس پر عمل کرنا درست ہے۔(۱)

Marne Ke Baad Apne Rishta  Dar Se Mulaqat Ho Gi

موت کے بعد کی زندگی پر ایمان

مسئلہ(۹): بعض لوگ یہ خیال کرتے ہیں کہ جب کوئی آدمی مرجاتا ہے، اور اسے دفن کردیا جاتا ہے، تو اس کی قبر سے روح اور ہڈیاں نکل کر ادھر ادھر گھومتی پھرتی ہیں، یہ محض ایک جاہلانہ تو ہم ہے، حضرت مولانا اشرف علی صاحب تھانوی رحمہ اللہ ایک سوال کے جواب میں فرماتے ہیں کہ’’ اگر روح منعَّم علیہ ہے یعنی اس پر اللہ کا انعام ہے، تو اسے یہاں آکر لپیٹنے پھرنے کی کیا ضرورت ہے، اور اگر معذَّب ہے یعنی گرفتارِ عذاب ہے، تو فرشتگانِ عذاب کیوں کر چھوڑ سکتے ہیں‘‘۔ (اشرف الجواب:۱/۱۶۳)

اسی طرح بعض لوگ یہ خیال کرتے ہیں، کہ جس گھر پر الو بیٹھ کر بول دے، اس میں موت یا کوئی بڑا حادثہ ضرور ہوگا، یہ خیال بھی جاہلانہ توہمات میں سے ہے، اس لیے اس طرح کے عقائد سے بچنا لازم وضروری ہے

I Covered these points in the video

> marne ke baad apne rishta dar se mulaqat ho gi
> kiya marne ke baad jannat me rishtedaaro se mulaqat hogi
> marne ke baad kya hoga,marne ke baad rooh ka wapas
> maulana sayyed saadi qasmi
> kya marne ke baad rishtey daar aapas me milte hain
> kya marne ke baad rishtey daar aapas me milte hain
> marne ke baad
> marne ke baad kya hota hai
> ruh ki mulakat
> marne ke baad rooh kahan jati
> star islamic aadam aur hawa miya biwi ka pehla rishta
> rohoon ki mulakat
> marne ke baad rooh kahan jati hai
>marne ke baad kya hog

Spread the love

Leave a Comment

%d bloggers like this: